Darya Ke Is Par Agar Tanhai

UstadaoN aur MuntaKhib ShoAraa ki shaayeri

Moderator: Muzaffar Ahmad Muzaffar

Post Reply
khaularaheeq
nau-waarid
Posts: 7
Joined: Sat May 02, 2015 3:59 pm
Do you know URDU language?: Yes

Darya Ke Is Par Agar Tanhai

Post by khaularaheeq » Mon Aug 28, 2017 11:07 am

‎دریا کے اِس پار اگر تنہائی ہے
‎دریا کے اس پار بھی کوئی تنہا ہو گا
‎۔
‎دریا کے اس پار ہی نظریں رہتی ہیں
‎دریا کے اس پار بسیرا کس کا ہو گا
‎۔
‎آس بھی ہے اور یاس بھی جس کے رنگوں میں
‎دریا کے اس پار کا منظر سپنا ہو گا
‎۔
‎دریا کے اِس پار تو ہم خود اپنے ہیں
‎دریا کے اس پار بھی کوئی اپنا ہو گا
‎۔
‎ہم پہلو میں اِک ساون کو ترسے ہیں
‎دریا کے اس پار بھی کوئی ترسا ہو گا
‎۔
‎جب بھی چاند نکلتا ہے وہ یاد آتا ہے
‎دریا کے اس پار وہ چاند کو تکتا ہو گا
‎۔
‎یادوں کا موسم ہے آنکھیں دریا ہیں
‎دریا کے اس پار بھی کوئی دریا ہو گا
‎۔
‎۔
‎(سید نثار حسین ہمدانی

Post Reply